33

ایک خاتون پائلٹ قومی ہیرو سے اچانک دہشتگرد کیسے بن گئیں؟عروج و زرال کی انوکھی داستان سامنے آ گئی

کیوبا (ویب ڈیسک ) یوکرین کی پارلیمنٹ پر حملے کی منصوبہ بندی کرنے کے الزام میں سابق جنگجو پائلٹ کو عمر قید کی سزا سنا دی گئی۔ 36 سالہ نادیہ ساوچینکو سابق رکن پارلیمنٹ بھی ہیں اور انہیں روس کے خلاف مزاحمت کی علامت پر قومی ہیرو سمجھا جاتا تھا۔ عدالت کا کہنا ہے کہ 36 برس
کی نادیہ ساوچنکو نے روس کے حمایتیوں سے ہتھیار حاصل کرکے حملہ کرنے کی منصوبہ بندی کی تھی ۔ نادیہ ساوچنکو یوکرائنی پارلیمنٹ کی رکن بھی رہ چکی ہیں اور انہوں نے یوکرین کی افواج اور روس کے حامی باغیوں کے درمیان جنگ میں بھی اہم کردار ادا کیا تھا جس کے بعد انہیں قومی ہیرو کا درجہ دیا گیا تھا۔ ان پر دو روسی صحافیوں کو مارٹر گولوں کی فائرنگ سے ہلاک کرنے کےالزامات بھی عائد کئے گئے تھے۔یاد رہے برطانوی سیکریٹری داخلہ امبر رُڈ نے وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف سے ملاقات کی جس میں انہوں نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی کوششیں اور قربانیوں کا اعتراف کیا۔وزیراعلیٰ آفس لاہور سے جاری بیان کے مطابق برطانوی وزیر داخلہ امبر رڈ اور شہباز شریف کے درمیان ملاقات میں دونوں ممالک کے تعلقات اور باہمی دلچسپی کے دیگر امور پر گفتگو ہوئی۔اس موقع پر برطانوی وزیر داخلہ نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان نے لائق تحسین کردار ادا کیا، وزیراعلیٰ پنجاب اور ان کی ٹیم کی محنت کے باعث پنجاب میں تعلیم اور صحت کے میدان میں بہتر نتائج سامنے آ رہے ہیں۔وزیراعلیٰ کے دفتر سے جاری بیان کے مطابق برطانوی وزیر خارجہ نے کہا کہ شہبازشریف کی قیادت میں حکومت
پنجاب کا اصلاحاتی پروگرام کامیابی سے ہمکنار ہو رہا ہے۔وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے اس موقع پر کہا کہ پاکستان اور برطانیہ کے تعلقات مضبوط بنیادوں پر قائم ہیں، تعلیم اور صحت کے شعبے میں برطانیہ کا تعاون قابل تحسین ہے۔شہباز شریف نے کہا کہ دہشت گردی کے خاتمے کے لیے پاک فوج، پولیس اور دیگر اداروں کی خدمات قابل تحسین ہیں، پنجاب کے بڑے شہروں میں کاؤنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ کی کاوشوں کے حوصلہ افزاء نتائج سامنے آرہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ لاہور سمیت پنجاب کے دیگر شہروں میں سیف سٹی اتھارٹی کے قیام کے باعث دہشت گردی اور دیگر جرائم کی شرح میں نمایاں کمی آئی ہے۔خیال رہے کہ وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف طبی معائنے کے لیے لندن میں موجود ہیں۔ زمین سے محبت کرنے والے آج ارتھ آور (Earth Hour) منا کر اس کا اظہار کریں گے اور غیر ضروری بجلی کے آلات کو ایک گھنٹے کے لیے بند کردیں گے۔پاکستان سمیت 88 ممالک کے 4 ہزار شہر اور قصبے اس مہم میں حصہ لے رہے ہیں تاکہ کرہ ارض کو ماحولیاتی آلودگی سے بچانے کے حوالے سے شعور اجاگر کیا جا سکے۔ارتھ آور کو ورلڈ وائڈ فنڈ (ڈبلیو ڈبلیو ایف) کی جانب سے 2007 میں متعارف کروایا گیا تھا، جس کے بعد اسے ہر سال مارچ کے آخر میں ایک مخصوص دن پر منایا جاتا ہے۔
یہ بھی ضرور پڑھیں : لاچارمریضوں کی بولتی تصویروں پر”مناظرعلی ” کی رونگٹے کھڑے کرنے والی تحریر

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں