Monday , October 22 2018
ہوم > پاکستان > تحریک انصاف اور کپتان کی اکثر پالیسیوں پر تنقید کیوں ہوتی ہے ؟ ہارون رشید نے بڑے درست وقت پر عمران خان کو اس کی سب سے بڑی کمزوری سے آگاہ کر دیا

تحریک انصاف اور کپتان کی اکثر پالیسیوں پر تنقید کیوں ہوتی ہے ؟ ہارون رشید نے بڑے درست وقت پر عمران خان کو اس کی سب سے بڑی کمزوری سے آگاہ کر دیا

لاہور(ویب ڈیسک)تحریکِ انصاف پہ تنقید اس لیے نہیں کہ ناقص سمجھا گیا ایک فیصلہ واپس لیا ہے ۔ شکایت یہ ہے کہ مستقل طور پہ یہی روش ہے۔ یہ اس کا شعار ہو گیا ہے ۔ مثال کے طور پر وہ پینتیس پنکچروں کی کہانی ، مثلاً اگست 2014ء کے دھرنوں میں

نامورکالم نگار ہارون رشید اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ امپائر کی انگلی کا انتظار ۔ سول نافرمانی کا ناقابلِ عمل اعلان ۔ کوئی بھی شخص سب فنون کا ماہر نہیں ہوتا۔ دوسری طرف ہر اس امتحان سے نمٹنے کا اہل ہوتا ہے ، زندگی میں جو در آئے۔ قرآنِ کریم کی ایک سے زیادہ آیات اس نکتے پہ روشنی ڈالتی ہیں ۔ ایک آیت کا مفہوم یہ ہے کہ کسی جان پر اس کی استطاعت سے زیادہ بوجھ نہیں ڈالا جاتا ۔ مشکلات کیوں آتی ہیں اور امتحان میں آدمی کیوں ڈالا جاتا ہے ۔ اس کا جواب یہ ہے کہ انسان کو پیدا ہی اس لیے کیا گیا۔ ”تاکہ ہم تمہیں آزمائیںکہ کون حسنِ عمل کے معیار پہ پورا اترتا ہے‘‘۔ ”اور ہم تمہیں آزمائیں گے خوف سے، بھوک سے، مال کے نقصان، زندگیوں کی تباہی سے اور باغیچوں کی تباہی سے…‘‘۔ احمقوں اور پیدائشی پیروکاروں کی بات چھوڑیے ، تا بہ ابد حسین ابنِ علی ؓ کا علم کیوں بلند رہے گا ؟ اس لیے کہ تاریخ میں شاید پہلی بار ساری آزمائشیں ایک ساتھ ان پر ٹوٹ پڑی تھیں۔ ہر طرف سے امنڈے طوفانوں میں وہ سلامت کھڑے رہے۔ مرثیہ نگاروں کو کچھ دیر کے لیے الگ رکھ دیجیے ۔

خوف نہ حزن، گھبراہٹ نہ پریشانی ، کنفیوژن نہ بے یقینی ۔ پہاڑوں کی طرح وہ ثابت و سالم رہے اور قندیلیوں کی طرح روشن ۔ جب تک گردشِ لیل و نہار قائم ہے ، ان کی یاد سے دلوں کی بستیوں میں چراغاں رہے گا ۔ یہ الگ بات کہ کوئی ادراک ہی نہ کرے۔ غور و فکر کی اہمیت سے آشنا ہی نہ ہو ۔ خود ترحمی اور مایوسی میں مبتلا ہو یا فرقہ واریت کا شکار ہو کر بغض میں مبتلا ہو جائے۔ ناصر کھوسہ اچھے آدمی ہیں ، اکثر سے بہتر ۔ بس یہ ہے کہ اس وقت ، اس منصب کے لیے موزوں نہ تھے، سیاسی طور پہ۔ پہلے سے غور کیا ہوتا تو یہ سامنے کا نکتہ تھا ۔ زیادہ اہم یہ کہ عمران خان کو کچھ اور، کچھ مختلف مشیروں کی ضرورت ہے۔ زیادہ مخلص اور کچھ زیادہ دماغ سوزی کرنے والوں کی۔ کبھی اپنی ذات کو علیحدہ رکھ کر جو سوچ سکیں ۔ آدمی اپنے راستے میں ہمیشہ خود حائل ہوتا ہے ۔ علم کوئی چیز نہیں، اگر اخلاص نہ ہو اور اخلاص بھی کچھ نہیں ، انکسار اگر تمام ہو جائے۔ زعم اگر پیدا ہو جائے۔ پھر یہ کہ پیدا ہو کر ٹھہر جائے تو زندگی ہی غارت ہوئی۔ ابلیس کیا کم علم تھا؟

تحریکِ انصاف میں صورتِ حال اس وقت یہ ہے کہ مستقل طور پر دو گروہ ایک دوسرے سے متصادم رہتے ہیں ۔ دونوں کو گوارا کرنا پڑتا ہے۔ پروفیسر احمد رفیق اختر کے ہاں ڈیڑھ دو سو مہمان مدعو تھے۔ ڈاکٹر امجد ثاقب ان میں سے ایک تھے ۔ صوفی سے خلق محبت بے حد کیا کرتی ہے ۔ ہجوم ہمیشہ اس پہ ٹوٹ پڑتے ہیں ۔ فکر لاحق ہوئی کہ نظر انداز ہو کر ڈاکٹر صاحب بد مزہ نہ ہو جائیں ۔ بالکل برعکس وہ شاد کام رہے ۔ اللہ اس انکسار کو ہمیشہ قائم رکھے ۔ بعد ازاں بھی رابطہ رکھا، بعد ازاں بھی فیض پایا۔ اپنے راستے میں خود کو وہ حائل نہیں ہونے دیتے۔ ایک شاندار منتظم، بیک وقت اربوں روپے سالانہ کے جو درجنوں منصوبے چلا رہا ہے۔ کبھی کوئی شکایت نہیں ہوئی۔ کبھی انہیں فریق نہیں سمجھا گیا ۔ نگران وزیرِ اعلیٰ کے لیے بہترین انتخاب ہوتے۔ شاید بہت تیزی سے ان پر اتفاقِ رائے ہو جاتا۔ پھر ڈاکٹر شعیب سڈل ہیں ۔ انتظام کے سب قرینوں سے آشنا، قوتِ فیصلہ سے مالا مال۔ تیس پینتیس سال کے نوجوان ایسے صحت مند، پرعزم ، با خبر ، چوکس اور انصاف پسند۔ ان دونوں کو عمران خان جانتے ہیں ۔ وہ کیوں نہ سوجھے۔ ڈاکٹر حسن عسکری اور ناصر درانی ، صاف ستھرے ، اجلے اور قابلِ اعتبار آدمی ہیں ۔ ناصر درانی نے انکار کر دیا ۔ دنیا ٹی وی کے پروگرام ”تھنک ٹینک‘‘ میں ہمارے محترم رفیق ڈاکٹر حسن عسکری علم کی دنیا کے آدمی ہیں ۔ بے تعصب، بلند خیال۔ فاروقِ اعظمؓ نے کہا تھا : مشورہ سب سے کرو لیکن فیصلہ خود کرو۔ مشورے میں احتیاط اور سلیقہ درکارہوتا ہے۔ اسی سے ہم محروم ہیں۔ اور کسی ایک کا کیا ذکر، سب کے سب۔ ایک طالب علمانہ زندگی ہوتی ہے اور ایک فخر و ناز کی ماری ہوئی ۔ قرآنِ کریم نے سرکارؐ کو ”سراجا منیرا‘‘ کہا، دمکتا ہوا سورج ۔ سرکارؐ جب معراج کے لیے تشریف لے گئے تو ”عبدہ‘‘ کہا گیا۔ اُس کا بندہ ۔ انکسار سے بڑی دولت کوئی نہیں اور زعم سے زیادہ مستقل پھندا کوئی دوسرا نہیں ۔ قید کر دیتا ہے، وہ آپ کو ایک تنگ دائرے میں قید! (ن)

یہ بھی دیکھیں

کرپشن کیخلاف مہم جاری لیکن بیرون ملک زیرسماعت ایک ایسے مقدمے میں کرپشن کا انکشاف ہرپاکستانی خون کے آنسو روئے

اسلام آباد(ویب ڈیسک) ملک بھر میں تحریک انصاف نے کرپشن کیخلاف مہم شروع کررکھی ہے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *