Tuesday , November 13 2018
ہوم > انٹرنیشنل > “تم میرے ساتھ یہ کام کرو تو تمھیں 15 لاکھ روپے دوں گا۔۔۔۔” بینک منیجر کی دعوت گناہ پر باغیرت خاتون نے ایسا کام کردیا کہ تمام اوباش کانوں کو ہاتھ لگائیں گے

“تم میرے ساتھ یہ کام کرو تو تمھیں 15 لاکھ روپے دوں گا۔۔۔۔” بینک منیجر کی دعوت گناہ پر باغیرت خاتون نے ایسا کام کردیا کہ تمام اوباش کانوں کو ہاتھ لگائیں گے

نئی دہلی (ویب ڈیسک)بھارت خواتین کے ساتھ زیادتی کے حوالے سے دنیا بھر میں بدنام ہے ، ایک عالمی ادارے کےسروے کے مطابق مودی جی کے دیس میں ہر منٹ80 خواتین کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔ملک بھر میں خواتین کیساتھ زیادتی کی روک تھام کیلئے موثر اقدامات نہیں کئے جاتے۔
بھارت میں خواتین کے لئے زندگی گزارنا مشکل ہی نہیں ناممکن ہوتا جا رہا ہے۔ خواتین گلیوں اور بازاروں کے علاوہ اپنے گھر کی چار دیواری کے اندر بھی محفوظ نہیں ہیں ۔ انسانی حقوق کی تنظیمیں بھی بھارتی نوجوانوں کے خلاف سرگرم عمل ہیں مگر اس کے باوجود خواتین کی عزت محفوظ ہے اور نہ ہی انہیں اپنے دیس میں تحفظ کا احساس ہے۔ لیکن بھارتی ریاست کرناٹک میں ایک خاتون نے قرض کے لئے درخواست دی جس پر منیجر نے خاتون سے کہا کہ وہ اس کے ساتھ رات گزارے تو اسے قرض مل جائے گا۔۔ تو جناب پھر کیا تھا ، خاتون کا پاراہائی ہوگیا ۔ کپڑے دھونے والا ڈنڈا اٹھایا اور اوباش نوجوان کو ایسا دھویا کہ سارے بھارتی نوجوان توبہ کریں گے۔نہ صرف ڈنڈے سے دھویا بلکہ خاتون نے لاتوں کھونسوں اور جوتوں سے اوباش نوجوان کی خوب پٹائی کی۔ اوباش کی پٹائی دیکھ کر اب تامل ناڈو کے نوجوان نہ صرف کانوں کو ہاتھ لگائیں گے بلکہ کسی بھی عورت کو چھیڑنے سے قبل سو بار سوچیں گے۔ بہادر بھارتی خاتون کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہوگئی ۔ جسے ہر شخص سراہا رہا ہے ۔ جبکہ کچھ لوگ اس عمل کو تنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں۔
واضح رہے کہ انڈیا کی حکومت کی جانب سے جاری کردہ تازہ اعداد و شمار کے مطابق ملک میں ہر 15 منٹ میں ایک بچہ جنسی زیادتی کا شکار ہوتا ہے۔انڈیا کے وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے سال سنہ 2016 میں جرائم کے اعداد و شمار کی رپورٹ پیش کی۔ اس رپورٹ کے مطابق بچوں کے خلاف جرائم کے تقریباً ایک لاکھ سات ہزار واقعات پیش آئے۔ان واقعات میں 36 ہزار واقعات بچوں کے ساتھ جنسی جرائم سے متعلق ہیں۔ایک عالمی ادارے کے سروے کے مطابق دنیا بھر میں بچوں کے خلاف جنسی زیادتی سمیت سب سے زیادہ جرائم انڈیا میں ہوتے ہیں۔انڈیا کی وزارت برائے خواتین اور بچوں کی فلاح و بہبود کی 2007 کی رپورٹ کے مطابق سروے میں حصہ لینے والے 53 فیصد بچوں کا کہنا ہے کہ ان کے ساتھ جنسی زیادتی ہوئی ہے۔ ان ہوشربا انکشافات کے بعد حکومت خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے۔ ایسے میں کرناٹک کی خاتون کا ردعمل خلاف توقع نہیں ہے ۔ خواتین اپنی عزت و آبرو کی حفاظت کیلئے اگر خود اٹھ کھڑی ہوں تو کسی بھی اوباش کی مجال نہیں کہ وہ ان کے خلاف کبھی کوئی برا خیال ذہن میں لائے ۔کرناٹک کی آنٹی نے بینک منیجر کو سبق سکھا کر دیگر خواتین کیلئے مثال قائم کردی ہے ۔

یہ بھی دیکھیں

تبدیلی والوں کا شاندار اقدام : نوجوانوں کو گمراہ ہونے سے بچانے کے لیے کیا فیصلہ کر لیا گیا ؟ اولاد سے پریشان والدین کے کام کی خبر

لندن (ویب ڈیسک) وزیر داخلہ ساجد جاوید نے نوجوانوں کو جرائم سے روکنے اور گینگز …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *