Monday , December 10 2018
ہوم > پاکستان > تحریک لبیک کے سربراہ خادم رضوی سمیت گرفتار افراد کو کب تک نظر بند رکھا جائے گا؟ فیصلہ ہو گیا

تحریک لبیک کے سربراہ خادم رضوی سمیت گرفتار افراد کو کب تک نظر بند رکھا جائے گا؟ فیصلہ ہو گیا

لاہور (ویب ڈیسک) محکمہ داخلہ پنجاب نے کہا ہے کہ تین ایم پی او کے تحت گرفتارافراد کو ایک ماہ کیلئے نظربند رکھاجائے گا، پنجاب بھر میں 1135 افراد کو گرفتار کرلیا گیا ہے، لاہورمیں 95 افراد کو گرفتار کیا گیا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق محکمہ داخلہ پنجاب نے بتایا ہے
کہ تین ایم پی او کے تحت پنجاب بھر میں 1135 افراد کو گرفتار کرلیا گیا ہے، لاہورمیں 95 افراد کو گرفتار کیا گیا۔ محکمہ داخلہ پنجاب کے مطابق تین ایم پی او کے تحت گرفتارافراد کو ایک ماہ کیلئے نظربند رکھاجائے گا۔ اسی طرح حکومت پنجاب نے دفعہ 144 کے تحت جلسے جلوسوں پر پابندی لگا دی۔ پنجاب حکومت نے صوبے بھرمیں ایک ہفتے کیلئے دفعہ 144 کے تحت پابندیاں عائد کردی ہیں۔ حکومت نے باقاعدہ نوٹیفکیشن بھی جاری کردیا ہے۔ اعلامیہ کے مطابق ہر قسم کے اسلحے کی نمائش اور استعمال پر پابندی ہوگی۔ پنجاب بھر میں دفعہ 144کے تحت پابندیاں یکم دسمبرتک عائد کی گئیں۔5 یا5 سے زائد افراد کےجمع ہونے کی اجازت نہیں ہوگی۔دوسری جانب تحریک لبیک کے سربراہ علامہ خادم حسین رضوی کی گرفتاری کیلئے جانے والی پولیس پارٹی کو یرغمال بنالیا گیا ہے۔ نجی ٹی وی سٹی 42 کے مطابق ایس پی ماڈل ٹاون تحریک لبیک کے رہنماوں کے ساتھ مذاکرات کرنے اور انہیں 25 نومبر کے احتجاج سے روکنے کے لیے گئے تھے تاہم انہیں مشتعل افراد نے یرغمال بنالیا ۔ ذرائع کے مطابق ایس پی ماڈل ٹاون سید علی اور ان کے گن مین کو یرغمال بنایا گیا ہے۔ تحریک لبیک کے رہنماوں کا کہنا ہے کہ 25 نومبر کو لیاقت باغ کا پروگرام ہر حال میں ہوگا، کارکنان شہر بھر میں دھرنوں کا سلسلہ جاری رکھیں۔ دوسری جانب تحریک لبیک کے سربراہ علامہ خادم رضوی کو گرفتار کرلیا گیا ہے جبکہ تحریک لبیک یارسول اللہ کے سربراہ علامہ اشرف آصف جلالی کی گرفتاری کے لیے چھاپے مارے جارہے ہیں۔

یہ بھی دیکھیں

تلور اور مور کے شکا ر اور گوشت کا جنون : بھارتی صوبہ راجھستان کے اکثر خاندان لاولد کیوں رہ جاتے ہیں ؟ دنگ کر ڈالنے والے حقائق پر مبنی ایک انوکھی تحریر

لاہور (ویب ڈیسک) کسی زمانہ میں افغانستان بھی تَلَور کے غیر ملکی شکاریوں کا پسندیدہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *