Monday , December 10 2018
ہوم > پاکستان > سالی اور سلہج پہ لٹو ، بیوی سے حمام نہیں ۔۔۔۔۔۔ کیا آپ اس معنی خیز مصرعے کا مطلب جانتے ہیں ؟ اگر نہیں تو یہ خبر پڑھیے

سالی اور سلہج پہ لٹو ، بیوی سے حمام نہیں ۔۔۔۔۔۔ کیا آپ اس معنی خیز مصرعے کا مطلب جانتے ہیں ؟ اگر نہیں تو یہ خبر پڑھیے

لاہور (ویب ڈیسک) پاکستان میں کرپشن سے پاک نئی حکومت کے سو دن مکمل ہونے پر کنونشن سنٹر میں ایک تاریخی اجتماع منعقد ہوا۔ مقررین کا جوش و خروش دیکھ کر بھٹو دور کی یاد تازہ ہو گئی۔وزیراعظم عمران خان نے اپنی سو دن کی کارکردگی پر بات کرتے ہوئے۔۔۔۔

نامور کالم نگار وجاہت مسعود اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ داخلہ، خارجہ اور معاشی میدان میں اپنی بے مثال کارکردگی کا دعویٰ کیا۔ مشکل یہ ہے کہ ان تینوں شعبوں میں تو ایک بھی قابلِ تصدیق کامیابی کی نشاندہی نہیں کر سکے۔ اپنی ہی قائم کردہ توقعات کا نشان نیچے لا کر یہ دعویٰ کیا گیا کہ ترقی کی سمت طے کر لی گئی ہے۔ سمت کے حوالے سے یوٹرن کا ذکر کثرتِ استعمال سے پامال ہو چکا۔ یہ کہنا البتہ مناسب ہو گا کہ حکومت نے جس سمت کا تعین کیا ہے اسے سادہ لفظوں میں بے سمتی کہنا چاہئے۔ وزیراعظم نے تو کسی ناکامی کا اعتراف نہیں کیا، درویش بے نشاں البتہ بتانا چاہے گا کہ گزشتہ تین ماہ میں حکومت کی سب سے بڑی ناکامی یہ ہے کہ جس دستور کی بنیاد پر منتخب ہوئی ہے اس دستور کی توقیر اور بالادستی کا کہیں ذکر نہیں۔ جس پارلیمنٹ نے انہیں وزیراعظم منتخب کیا، وہ پارلیمنٹ ہی عضو معطل ہو گئی ہے۔ تین ماہ میں ایک فنانس بل کے علاوہ کوئی قانون سازی نہیں ہو سکی۔ پارلیمنٹ میں اسٹینڈنگ کمیٹیاں تک قائم نہیں ہو سکیں۔ لکھ رکھیے کہ احتساب کا عمل پاکستان میں پہلی بار نہیں ہو رہا۔ یہ وہ سقیم و عقیم دیسی مرغی ہے جو ہمیشہ تفرقے، بحران اور بدحالی کے انڈے دیتی ہے۔ احتساب کا نعرہ ہماری تاریخ میں سیاسی عمل کی ساکھ ختم کرنے کا ہتھیار رہا ہے۔ اس سے کوئی معاشی بہتری پیدا نہیں ہو گی، الٹا سیاسی منظر پر غیر ضروری تلخی اور نقصان دہ قطبیت جنم لے گی۔ پچھلے سو دن میں وزیراعظم اور ان کے رفقا نے اداروں کے ایک پیج پہ ہونے کا بار بار ذکر کیا ہے، بدقسمتی سے جس صفحے پہ ادارے یکجا ہوئے ہیں وہاں پارلیمنٹ نامی ادارے کا کوئی ذکر نہیں۔ تو لیجیے اب شاد عارفی کا مصرع سن لیجیے اور اگر مفہوم جاننے میں کوئی دقت ہو تو مفتی عبدالقوی سے رجوع فرمائیے۔ ۔۔۔۔سالی اور سلہج پہ لٹو، بیوی سے حمام نہیں۔

یہ بھی دیکھیں

تلور اور مور کے شکا ر اور گوشت کا جنون : بھارتی صوبہ راجھستان کے اکثر خاندان لاولد کیوں رہ جاتے ہیں ؟ دنگ کر ڈالنے والے حقائق پر مبنی ایک انوکھی تحریر

لاہور (ویب ڈیسک) کسی زمانہ میں افغانستان بھی تَلَور کے غیر ملکی شکاریوں کا پسندیدہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *