Saturday , February 23 2019
ہوم > پاکستان > ’’خان صاحب! پبلک اکاؤنٹ کمیٹی کی طرح کہی ’ این آر او‘ بھی نہ ہوجائے۔۔۔ ‘‘ شیخ رشید کا عمران خان سے سوال، وزیر اعظم کے جواب دے پوری تحریک انصاف کو نئی سوچ میں ڈال دیا

’’خان صاحب! پبلک اکاؤنٹ کمیٹی کی طرح کہی ’ این آر او‘ بھی نہ ہوجائے۔۔۔ ‘‘ شیخ رشید کا عمران خان سے سوال، وزیر اعظم کے جواب دے پوری تحریک انصاف کو نئی سوچ میں ڈال دیا

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشیداحمد نے کہاہے کہ وزیر اعظم عمران خان سے کہاہے کہ دیکھیے گا کہیں پبلک اکائونٹس کمیٹی کے چیئرمین کی طرح این آر او کا معاملہ بھی نہ ہوجائے جس پر عمران خان نے کہا کہ دنیا ادھر کی اُدھر ہو جائے آصف زردار ی

اور نواز شریف کو این آر او نہیں ملے گا،قطری سے پتھری تک کی سیاست دفن ہونے جارہی ہے، پبلک اکائونٹس کمیٹی کا ممبر بن چکاہوں ، شہباز شریف کاپبلک اکائونٹس کمیٹی کاچیئرمین ہونا تحریک انصاف اور عمرا ن خان کے شایان شان نہیں ،وزیر اعظم سے کہاہے کہ شہباز شریف کے خلاف تحریک عدم اعتمادلائی جائے ، عمران خان نے ڈیفالٹ ہوتے ملک کو بچایا ہے اور جو لوگ ملک کو نوچ کر کھاگئے ہیں اس کی قیمت غریب آدمی ادا کر رہاہے ، کچھ لوگوںکو صر ف مفروری کی بیماری ہے،بغیر ٹکٹ سفر کرنے والوں کے خلاف کرائے پرہیلی کاپٹر لے کربھی چھاپے مارنے پڑے تو دریغ نہیں کریں گے ۔ان خیالات کا اظہارانہوںنے ریلوے ہیڈ کوارٹرمیں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا ۔ شیخ رشید نے کہا کہ عمران خان کے بیان کی توثیق کرتاہوں کہ قانون سب کیلئے برابر ہے ۔ انہوںنے وزیراعظم عمران خان سے گزشتہ ہفتے دو ملاقاتیں ہوئی ہیں او ران سے کہاہے کہ شہباز شریف بطور چیئرمین پبلک اکائونٹس کمیٹی کسی طرح قبول اور اس کے خلاف تحریک عدم اعتمادلائی جائے ۔جو یہ کہتا ہے کہ چوروں کوسردار کواحتساب کے مقام پر بٹھایا جا سکتا ہے وہ میرے ساتھ مناظرہ کر لے ۔ انہوں نے عبد

العلیم خان کی گرفتاری کے حوالے سے سوال کے جواب میں کہا کہ حکومت نے کہا ہے کہ آئین اورقانون کے مطابق سلوک کیا جائے اور اس گرفتاری پر حکومت نے کوئی احتجاج نہیں کیا ۔ انہوں نے ایک سوال کے جواب میں انہوںنے کہا کہ جن لوگوںنے پارلیمان کی کارروائی کو آگے بڑھانے کے لئے شہباز شریف کو پبلک اکائونٹس کمیٹی کا چیئرمین بنانے کامشورہ دیا انہوں نے صحیح نہیں کیا ۔انہوں نے کہا کہ پی اے سی کا ممبر بنانے میں سپیکر کا کوئی کردار نہیں بلکہ اس میں سپیکر کا کردار پوسٹ آفس کاہے، یہ پارٹی سربراہ کا صوابدید اختیارہے اور عمران خان نے مجھے نامزد کر کے ڈائریکٹوجاری کر دیا ہے اور میں پی اے سی کا ممبر بن چکاہوں ۔ کمیٹی کے ممبرتیس ہونے چائیں اور کسی بھی ممبر کو تبدیل کیا جا سکتاہے ۔ انہوںنے کہا کہ شہباز شریف گھٹنے کے بل بیٹھا ہے کہ شیخ رشید کو پی اے سی میں نہ لیا جائے ۔انہوںنے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ آج کل کچھ لوگوںکوجوبیماریاںہیں وہ مفروری کی بیماریاںہیں۔ میںنے ایک اجلاس کے بعددروازے سے نکلتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان سے کہاکہ دیکھیے گا پی اے سی کے چیئرمین کی طرح این آراو کا معاملہ نہ ہو جائے جس پر عمران خان نے کہا ہے کہ دنیا ادھر کی اُدھر ہوجائے آصف علی زردای اور نواز شریف کو این آر او نہیںملے گا ۔انہوں نے کہاکہ بلاول نے تین بیان دئیے میں نے اس کے جواب میں چھ
بیانات دئیے ،اس نے اپنے بیان پر معذرت کر لی اور اس نے صلح کر لی تو میں نے بھی صلح کر لی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کچھ لوگوںکو صرف بھاگنے اور مفروری کی بیماریاں ہیں، انہیںاتفاق فائونڈری کے ہسپتال میں داخل کرائو سب ٹھیک ہو جائیں گے۔ آپ بیس سال پہلے ان کی ضمانت کی درخواست دیکھ لو اس میںیہی بیماری تھی ۔یہ پتھری کا کہتے ہیں لال حویلی آئیں مرشدپاک ایک انگلی لگائے گا پتھری نیچے گر جائے گی،اب قطری سے پتھری تک کی سیاست دفن ہونے جارہی ہے ۔ انہوںنے کہا کہ میں کہہ چکا ہوں کہ تیس مارچ تک جھاڑو پھر جائے گا لیکن پروسیجر طویل ہے مجھے ایک دو ماہ کی گنجائش بھی دیدی جائے۔ انہوںنے کہا کہ چار فریٹ ٹرینوں کا اضافہ کر کے دکھائیں گے ۔ ایم ایل ون کا انتظارہے اور اس کا مارچ تک فیصلہ ہو جائے گا ،اس کے لئے وزیر اعظم کی سربراہی میں اسد عمر ،خسرو بختیار،عبدالرزاق دائو پر کمیٹی بنی ہے جس میں میںبھی شامل ہوں ۔انہوںنے کہا کہ ہمارے آپریشن کے بعد بغیر ٹکٹ سفرکرنیوالوں کی شرح میں73فیصد کمی ہوگئی ، بغیر ٹکٹ سفر کرنیوالوںسے ایک ہفتے میںچھ کروڑ روپے کی وصولی بڑاکام ہے ،اگر ہمیں ہیلی کاپٹر کرائے پر لے کر بھی چھاپے مارنے پڑے دریغ نہیں کریں گے ۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے تین سکول بند کر دئیے ہیں۔ ریلوے کے سکولوں اور ہسپتالوں کو نجی شعبوںکودینے کے لئے ٹینڈرکرنے جارہے ہیں،ہماری خواہش ہے کہ میڈیکل کالجز ہمارے ہسپتالوں کو لیں اور ہمارے مزدوروںکو صحت کی سہولیات دیں۔شیخ رشید نے کہا کہ سابق حکومت نے ریلوے میں تباہی اور بربادی کی، 12فروری کو وزیراعظم تھل ایکسپریس کا افتتاح کریں گے، 30مارچ کو پہلی وی آئی پی ٹرین لاہور سے کراچی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ نارووال سٹیشن پر 5ارب لگا دیئے گئے، کراچی اور لاہور اسٹیشن پر 2روپے بھی نہیں لگے، کرتار پور سے ننکانہ تک ٹرین چلانا چاہتے تھے، وفاقی کابینہ نے ٹرین چلانے کی اجازت نہیں دی۔

یہ بھی دیکھیں

پلوامہ حملے کے بعد پاک بھارت تجارت تا حال بند ۔۔ آئندہ آنے والے دنوں میں کون کون سی اشیاء مہنگی ہونے کا خدشہ ہے ؟ عوام کو پریشان کر دینے والی خبر

لاہور(ویب ڈیسک ) پاک بھارت تعلقات میں کشیدگی کے سبب واہگہ بارڈر سے دونوں ممالک …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *