30

اب پا کستان کو ورلڈ کپ جیتنے سے کو ئی نہیں روک سکتا کیو نکہ وزیراعظم عمران خان کا ورلڈکپ کیلئے قومی ٹیم کی تیاریوں کی نگرانی کرنے کا فیصلہ

لاہور (نیوز ڈیسک) وزیراعظم کا ورلڈکپ کیلئے قومی ٹیم کی تیاریوں کی نگرانی کرنے کا فیصلہ، جمعہ کے روز عمران خان قومی ٹیم سے ملاقات کریں گے، کھلاڑیوں کو ورلڈکپ کیلئے مشورے بھی دیں گے۔ تفصیلات کے مطابق وزیراعظم نے قومی کرکٹ ٹیم کی ورلڈکپ کی تیاریوں کی نگرانی کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

وزیراعظم نے قومی کرکٹ ٹیم سے انگلینڈ روانگی سے قبل ملاقات کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان جمعہ کے روز قومی کرکٹ ٹیم کے ملاقات کریں گے۔ ملاقات کے دوران وزیراعظم عمران خان قومی کرکٹرز کو خصوصی مشورے بھی دیں گے۔ جبکہ وزیراعظم دورہ انگلینڈ اور ورلڈکپ کے دوران بھی قومی کرکٹ ٹیم کی کارکردگی پر مسلسل نظر بھی رکھیں گے۔ واضح رہے کہ ورلڈکپ اور دورہ انگلینڈ کیلئے قومی کرکٹ ٹیم کا اعلان ایک روز میں کر دیا جائے گا۔واضح رہے کہ پاکستان رواں ماہ کے آخر میں انگلینڈ کیلئے روانہ ہوگی۔ قومی ٹیم انگلینڈ کیخلاف ٹی ٹوئنٹی میچ اور ایک روزہ میچز کی سیریز کھیلے گی۔ سیریز کے بعد قومی ٹیم کچھ پریکٹس میچز بھی کھیلی گی، جبکہ عالمی کپ کیلئے قومی ٹیم اپنی مہم کا آغاز ویسٹ انڈیز کیخلاف میچ سے کرے گی۔ دوسری جانب ےئر مین پاکستان کرکٹ بورڈ احسان مانی نے کہا ہے کہ بھارت سے کرکٹ کھیلنے کے لئے منتیں نہیں کریں گے ، بلوچستان میں کرکٹ کی بنیاد اچھی نہ ہونے کی وجہ سے یہا ں سے تگڑے کھلاڑی سامنے نہیں آ پاتے ، مجھے گورننگ بورڈ کے ممبران کے ایجنڈا کی بجائی پاکستان کرکٹ کی بہتری میں دلچسپی ہے ، پاکستانی ٹیم عالمی رینکنگ میں نمبر 7پر چلی گئی ہے جو ناقابل

قبول ہے، کوئٹہ کا بگٹی اسٹیدیم اچھا ہے اس میں فرسٹ کلاس میچز کروانے کے لئے معاونت فراہم کریں گے ۔، یہ بات انہوں نے بدھ کو بگٹی اسٹیڈیم میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہی ، احسان مانی نے کہا کہ وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال نے صوبے میں کرکٹ کی بہتری کے لئے دلچسپی دیکھائی ہے جس کے بعد ان سے ملاقات ہوئی جو انتہائی مثبت رہی ،وزیراعلیٰ کو پیغام دیا ہے کہ پی سی بی کرکٹ کی بہتری کے لئے بلوچستان حکومت کی معاونت کر نے کے لئے تیار ہے۔انہوں نے کہا کہ ہماری کوشش ہے کہ بلوچستان میں کرکٹ کو لائیں اور یہاں کے کھلاڑی فرسٹ کلا س کرکٹ کھیلیں ،بگٹی اسٹیڈیم کی گراؤنڈ کی سیٹنگ اچھی ہے یہاں انفراسٹرکچر بھی موجود ہے کم خرچ میں اس گراؤنڈ کو اچھا اسٹیڈیم بنا سکتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ امید ہے یہا ں فرسٹ کلاس میچ اور ہو سکا تو انٹرنیشنل میچز کھیلے جائیں گے ۔انہوں نے کہا کہ کوئٹہ میں 8سے 10سال سے قومی سطح کی کرکٹ نہیں کھیلی گئی جس کی وجہ سے یہاں کچھ چیزیں بہتر کرنے کی ضرورت ہے جبکہ پی ایس ایل کے میچ کے حوالے سے کوئٹہ گلیڈی ایٹرز اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کی رائے لیں گے ہم چاہتے

ہیں کہ یہاں میچز ہوں لیکن افسوس کی بات ہے بلوچستان کے ریجنز نے اچھے کرکٹر تیار نہیں کرتے اچھے کھلاڑی اسکول اور کلبز کے لیول سے آگے آتے ہیں یہ کام جلدی نہیں ہو سکتا اس میں وقت لگے گا،اگر ریجنل لیول پر بلوچستان کے اضلاع تگڑے کھلاڑی آگے لانے میں ناکام رہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ گورننگ بور ڈ کے ارکان کا الزام بالکل غلط ہے ایم ڈی رکھنے سے پہلے گورننگ بورڈ سے منظوری لی گئی تھی جو ریکارڈ کا حصہ ہے جس پر پانچ لوگوں نے کاغذدستخط کیے ان میں چار اجلاس میں شامل تھے ،انہوں نے کہا کہ بورڈ ممبران اپنا ایجنڈا لیکر آئے تھے ، ہمیں پاکستان کرکٹ کے لئے کام کرنا ہے ،مجھے اس بات میں دلچسپی نہیں کہ ایک ڈسٹرکٹ کا ممبر کا کیا ایجنڈا ہے ہمیں کرکٹ کی بہتری کے لئے کام کرنا ہے بورڈ کے ممبران کے نامناسب مطالبے ہیں ۔ ایک سوال کے جواب میں احسان مانی نے کہا کہ پی سی بی کا کام کرکٹ کی بہتری کے لئے ٹیکنکل سپورٹ دینا ہے انفراسٹرکچر تعمیر کرنا حکومت کاکام ہے لیکن اس میں معاونت کرنا ہمارا کام ہے تاکہ اسٹیڈیم معیار کے مطابق ہوں ۔انہوں نے کہا کہ اس وقت پاکستانی ٹیم ٹیسٹ میں نمبر 7پر ہے جو ناقابل قبول ہے ہم ٹیم مضبوط کرنا چاہتے ہیں تاکہ لوگ ہم سے کھیلنے کے لئے آئیں جس سے ریونیو ملے گا اور کرکٹ میں بہتری آئیگی ۔انہوں نے کہا کہ بورڈ ممبر ا ن نے کوئی قرار داد پاس نہیں کی انہوں نے ایک کاغذ دیا تھا جسے پیش کرنے کی کی اجازت نہیں دی ،ممبران کو معلوم تھا کہ اجلاس میں کیا بات ہورہی ہے لیکن وہ اجلاس میں پھر بھی اپنا کاغذ لائے،ایک سوال کے جواب میں احسان مانی نے کہا کہ بھارتی سے نہ منت کریں گے نہ پیچھے جائیں گے ہم اپنی عزت رکھیں گے بھارت سے پہلے بھی انتا عرصہ نہیں کھیلے اگر مزید نہیں کھلیں گے تو حرج نہیں ، بھارت اگر مثبت بات کرے اور کھیلنا چاہے توکھیلیں گے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں