1

شرمناک الزامات پر چیئرمین نیب خود میدان میں آگئے۔۔۔۔ بڑا اعلان کر دیا

اسلام آباد (نیوز ڈیسک )چیئر مین نیب جسٹس (ر)جاوید اقبال نے کہاہے کہ کسی خوف یا دباﺅ میں نہیں آﺅں گا ، احتساب کا عمل جاری رہے گا ۔ تفصیلات کے مطابق اے آروائی نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے چیئر مین نیب نے کہاکہ میں کسی خوف یا دباﺅ میں نہیں آﺅں گا ،

اپنے مقصد پر ڈٹا ہوا ہوں ، احتساب کا عمل جاری رہے گا ، کسی بھی قسم کی بلیک میلنگ میں نہیں آﺅں گا ۔ انہوں نے کہا کہ اوچھے ہتھکنڈوں سے ہر گز خوفزدہ نہیں ہونگا ،آئین وقانون کے مطابق اپنی ذمہ داریاں نبھاتا رہوں گا ۔ خیال رہے گزشتہ روز نجی ٹی وی چینل نیوز ون نے اپنے چینل پر ایک وڈیو چلائی جس تھی جس میں چئیرمین نیب جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال کی تصویر کے ساتھ ایک فون کال کی ریکارڈنگ چلائی گئی تھی جس میں کوئی شخص جس کی شخص عورت کو جنسی طور پر ہراساں کر رہا تھا۔نیوز ون نے دعویٰ کیا تھا کہ یہ آواز نیب نے جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال کی ہے اور انہوں نے خاتون کو ہراساں کیا ہے لیکن اب چینل نے اس وڈیو کو جعلی قرار دے دیا ہے۔ نیب نے بھی جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال کی جانب سے خاتون کو ہراساں کرنے کی وڈیو کی سختی سے تردید کر دی ہے۔ قومی احتساب بیورو نے نیوز ون ٹی وی پر چیئر مین نیب کے حوالے سے نشر ہونے والی خبر کی سختی سے تردید کرتے ہوئے اسے حقائق کے منافی، من گھڑت ، بے بنیاد اور جھوٹ پر مبنی پراپیگنڈہ قرار

دیتے ہوئے کہا ہے کہ یہ ایک بلیک میلرز کا گروپ ہے۔جس کا مقصد نیب اور چیئر مین نیب کی ساکھ کو مجروع کرنا مقصود ہے نیب نے تمام دباؤ اور بلیک میلنگ کو پش پشت رکھتے ہوئے اس بلیک میلر گروہ کے دو افراد کو نہ صرف گرفتار کیا ہے بلکہ ریفرنس کی بھی منظوری دے دی گئی ہے۔ یہ امر قابل ذکر ہے کہ اس بلیک میلر گروپ کے خلاف ملک کے مختلف حصوں میں 42 ایف آئی آر درج ہیں جن میں بلیک میلنگ ، اغواہ برائے تعاون ، عوام کو بڑے پیمانے پر لوٹنے اور نیب اور ایف آئی اے کے جعلی افر بن کر سرکاری اور پرائیویٹ افراد کو بلیک میل کر کے کروڑوں روپے لوٹنے کے ثبوت نیب کے پاس موجود ہیں موجودہ خبر بھی بلیک میلنگ کر کے نیب کے ریفرنس سے فرار کا راستہ ہے۔واضح رہے اس مذکورہ بلیک میلر گورپ کا سرغنہ فاروق اس وقت کوٹ لکھپت جیل لاہور میں قید ہے اس کے علاوہ نیوز ون ٹی وی نے بھی اپنے خبر کی تردید اور اسے حقائق کے منافی قرار دیتے ہوئے چیئر مین نیب سے دل آزاری پر معذرت کی ہے جو صحافت کے اصولوں کے مطابق ہے۔ نجی ٹی وی چینل نے معذرت کر لی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں